Sunday, 31 January 2016

عذیر بلوچ کی گرفتاری پر اٹھتے سوالات


کراچی: لیاری گینگ وار کے سرغنہ اور کراچی میں خوف کی علامت عذیر بلوچ نے مئی 2012 میں میڈیا سے گفتگو میں کہا تھا کہ وہ سندھ حکومت کو کبھی بھی گرفتاری نہیں دیں گے کیونکہ وہ ان کو پھنسا کر مار دینا چاہتی ہے اس لیے وہ
پنجاب میں گرفتاری دینا چاہیں گے تاکہ وہاں کی عدالتوں میں مقدمہ چلے۔

ستمبر 2013 میں کراچی میں پولیس و رینجرز کا مشترکہ ٹارگٹڈ آپریشن شروع کرنے کا اعلان کیا گیا، اور آپریشن کے اعلان کے فوری بعد اطلاعات سامنے آئیں کہ عذیر بلوچ بیرون ملک فرار ہوگیا ہے۔


بعد ازاں دسمبر 2014 کے آخری ہفتے میں یہ خبر سامنے آئی کہ عذیر بلوچ کو متحدہ عرب امارات میں مسقط سے دبئی جاتے ہوئے گرفتار کر لیا گیا اور اس گرفتاری کے 5 ماہ بعد اپریل 2015 میں یہ خبر بھی سامنے آئی کہ عذیر بلوچ کو دبئی میں رہائی مل گئی ہے۔

9 ماہ قبل عذیر بلوچ کی دبئی میں رہائی کی خبروں کے بعد سے وہ 'لاپتہ' تھے، کبھی کہا جاتا تھا کہ انہوں نے افغانستان سے خاندان کے افراد سے رابطہ کیا ہے جبکہ جون 2015 کے وسط میں یہ رپورٹس سامنے آئیں کہ عذیر بلوچ کو پاکستانی سیکیورٹی ادارے حراست میں لے کر پشاور منتقل کر چکے ہیں جبکہ اس نے دوران تفتیش بینظیر بھٹو کے سابق سیکیورٹی افسر خالد شہنشاہ کے حوالے سے کوئی انکشاف بھی کیا ہے،لیکن اس حوالے سے کوئی بھی تفصیل کبھی سامنے نہیں آئی۔

خالد شہنشاہ 27 دسمبر 2007 کو بینظیر بھٹو کے قتل کے روز بھی ان کی حفاظت پر مامور تھے جبکہ ان کی ہلاکت کے 7 ماہ بعد جولائی 2008 میں خالد شہنشاہ پر کراچی میں ان کے گھر کے قریب فائرنگ کی گئی، جنھیں زخمی حالت میں ضیاء الدین ہسپتال منتقل کیا گیا،جہاں بعد ازاں خالد شہنشاہ کا انتقال ہو گیا۔

یہ وہی ہسپتال ہے جس کے مالک پیپلز پارٹی کے رہنما ڈاکٹر عاصم ہیں ۔ جنھیں رینجر نے اگست 2015 میں گرفتار کیا تھا۔ ڈاکٹر پر ہسپتال میں جرائم پیشہ افراد کا علاج کرنے سمیت دیگر کئی الزامات عائد کیے گئے، تاحال وہ سیکیورٹی اداروں کی حراست میں ہیں اور ان سے ابھی تک تفتیش جاری ہے۔

پیپلز پارٹی کے لیاری سے سابق رکن قومی اسمبلی نبیل گبول، خالد شہنشاہ کے قتل کا الزام عذیر بلوچ پر عائد کرتے ہیں جب کہ جس وقت خالد شہنشاہ کا قتل ہوا اس وقت سندھ کے وزیر داخلہ ڈاکٹر ذوالفقار مرزا تھے۔

ڈاکٹر ذوالفقار مرزا پر عذیر بلوچ اور ان کی بنائے ہوئے گروپ کالعدم پیپلز امن کمیٹی کی سرپرستی کا الزام عائد کیا جاتا رہا ہے اور وہ اس تعلق کا اعتراف متعدد مرتبہ کر چکے ہیں۔

اب عذیر بلوچ کی کراچی میں داخلے کی کوشش کے دوران گرفتاری کے بعد کئی سوالات نے جنم لیا ہے۔

رینجرز نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ عذیر بلوچ کو اُس وقت گرفتار کیا گیا جب وہ کراچی میں داخل ہو رہا تھا۔ لیکن یہاں سوال یہ اٹھتا ہے کہ عذیر بلوچ پاکستان کب اور کس طرح پاکستان آیا؟ اور اگر وہ غیر قانونی طور پر پاکستان آیا تھا تو کس ملک سے پاکستان میں داخل ہوا تھا اور اسے گرفتار کیوں نہیں کیا گیا؟ اور اگر وہ غیر قانونی طور پر پاکستان میں داخل ہوا تھا تو ملک کے کسی اور حصے کی کوئی بھی سیکیورٹی فورس یا خفیہ ایجنسی اس کو گرفتار کیوں نہ کر سکی؟

یہ بھی نہیں بتایا گیا کہ جس وقت عذیر بلوچ کو حراست میں لیا گیا اُس وقت وہ کس گاڑی میں سوار تھا؟ عذیر کے پاس سے اسلحہ بھی برآمد ہونے کا دعویٰ کیا گیا، لیکن یہ نہیں بتایا گیا کہ اسلحہ کونسا تھا؟

یہ بات بھی قابل غور ہے کہ اگر عذیر بلوچ کے پاس اسلحہ موجود تھا تو اس نے وہ استعمال کیوں نہیں کیا؟ اور اتنی آسانی سے کیسے گرفتاری دے دی۔


ماضی میں کراچی الیکٹرک کارپوریشن (کے ای ایس سی) کے چئیرمین شاہد حامد کے قاتل صولت مرزا نے بھی کئی انکشافات کیے تھے، صولت کو تو پھانسی ہو گئی، لیکن جن افراد کے نام لیے گئے تھے ان کے خلاف کسی بھی قسم کی کارروائی سامنے نہیں آئی۔

اب دیکھنا ہے کہ عذیر بلوچ دوران تفتیش کن کن افراد پر جرائم میں ملوث ہونے کے الزامات عائد کرتا ہے اور ان کے خلاف بھی کوئی کارروائی ہو پائے گی؟ اس کے ساتھ ساتھ پاکستان میں سیکیورٹی کے حوالے سے کئی اقدامات اٹھائے گئے ہیں جنہیں سراہا جانا چاہیے لیکن ہمیں یقینی طور پر مقدمات اور گرفتاریوں کو بھی شفاف بنانے کی ضرورت ہے.

Sunday, 24 January 2016

سانحہ باچاخان یونیورسٹی ،دہشتگردوں کی کالزکیسے ٹریس ہوئی ؟تہلکہ خیزانکشاف


.آئی ایس پی آر کے ڈی جی لیفٹیننٹ جنرل عاصم باجوہ نے پریس کانفرنس کے دوران انکشاف کیاکہ چار سدہ حملہ حملہ آوروں نے میڈیا کے ایک رپورٹر سے گفتگو کی اور حملے کی ذمہ داری قبول کی گئی، اس کی کال کو ٹریس کرکے ریکارڈ کر لیا گیا تھا، افغانستان سے ایک نمبر سے 4 کالیں چارسدہ میں کی گئیں۔انہوں نے صحافیوں کو دہشت گرد کی ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو صحافیوں کو سنائی، جس میں وہ حملے کی ذمہ داری قبول کر رہا ہے۔لیفٹیننٹ جنرل عاصم باجوہ نے کہا کہ چارسدہ یونیورٹی کے 4 حملہ آور تھے جبکہ 5 مرکزی سہولت کار تھے ۔

Saturday, 23 January 2016

Back from the enemy country


RARELY are Pakistanis allowed to cross their eastern border. We are told that’s so because on the other side is the enemy. Visa restrictions ensure that only the slightest trickle of people flows in either direction. Hence ordinary academics like me rarely get to interact with their Indian counterparts. But an invitation to speak at the Hyderabad Literary Festival, and the fortuitous grant of a four-city non-police reporting visa, led to my 11-day 12-lecture marathon at Indian universities, colleges, and various public places. This unusual situation leads me here to share sundry observations.

At first blush, it seemed I hadn’t travelled far at all. My first public colloquium was delivered in Urdu at the Maulana Azad National Urdu University (MANUU) in Hyderabad. With most females in burqa, and most young men bearing beards, MANUU is more conservative in appearance than any Urdu university (there are several) on the Pakistani side.

Established in 1998, it seeks to “promote and develop the Urdu language and to impart education and training in vocational and technical subjects”. Relative to its Pakistani counterparts, it is better endowed in terms of land, infrastructure and resources.

But there’s a still bigger difference: this university’s students are largely graduates of Indian madressahs while almost all university students in Pakistan come from secular schools. Thus, MANUU’s development of video “bridge courses” in Urdu must be considered as a significant effort to teach English and certain marketable skills to those with only religious training. I am not aware of any comparable programme in Pakistan. Shouldn’t we over here be asking how the surging output of Pakistani madressahs is to be handled? Why have we abandoned efforts to help those for whom secular schooling was never a choice?

The face of modern India is visible at the various Indian Institutes of Technology.
To my embarrassment, I was unable to fulfil my host’s request to recommend good introductory textbooks in Urdu from Pakistan. But how could I? Such books don’t exist and probably never will. Although I give science lectures as often in Urdu as English, the books I use are only in English. Somehow Pakistan never summoned the necessary vigour for transplanting modern ideas into Urdu. The impetus for this has been lost forever. Urdu, as the language of Islam in undivided India, once had enormous political significance. Education in Urdu was demanded by the Muslim League as a reason for wanting Pakistan!

A little down the road lies a different world. At the Indian Institute of Information Technology (IIIT) the best and brightest of India’s young, selected after cut-throat competition, are engaged in a furious race to the top. IIIT-H boasts that its fresh graduates have recently been snapped up with fantastic Rs1.5 crore (Indian) salaries by corporate entities such as Google and Facebook.

This face of modern India is equally visible at the various Indian Institutes of Technology (IIT), whose numbers have exploded from four to 18. They are the showpieces of Indian higher education. I spoke at three — Bombay, Gandhinagar, and Delhi — and was not disappointed. But some Indian academics feel otherwise.

Engineering education at the IITs, says Prof Raghubir Sahran of IIT-GN, has remained “mainly mimetic of foreign models (like MIT) and captive to the demands of the market and corporate agendas”. My physicist friend, Prof Deshdeep Sahdev, agrees. He left IIT-K to start his own company that now competes with Hewlett Packard in making tunnelling electron microscopes and says IIT students are strongly drill-oriented, not innovative.

Still, even if the IITs are not top class, they are certainly good. Why has Pakistan failed in making its own version of the IITs? One essential condition is openness to the world of ideas. This mandates the physical presence of foreign visitors.

Indeed, on Indian campuses one sees a large number of foreigners — American, European, Japanese, and Chinese.

They come for short visits as well as long stays, enriching universities and research centres.

Not so in Pakistan where foreigners are a rarity, to be regarded with suspicion. For example, at the National Centre for Physics, which is nominally a part of Quaid-i-Azam University but is actually ‘owned’ by the Strategic Plans Division (the custodian of Pakistan’s nuclear weapons), academic visitors are so tightly restricted that they seek to flee their jails soon after arrival.

Those who came from Canada, Turkey and Iran to a recent conference at the NCP protested in writing and privately told us that they would never want to come back.

Tensions between secular and religious forces appear high in Modi’s India. Although an outsider cannot accurately judge the extent, I saw sparks fly when Nayantara Sahgal, the celebrated novelist who was the first of 35 Indian intellectuals to hand back their government awards, shared the stage with the governor of Andhra Pradesh and Telangana. After she spoke on the threats to writers, the murder of three Indian rationalists, and the lynching of a Muslim man falsely accused of possessing beef, the enraged governor threw aside his prepared speech and excoriated her for siding with terrorists.

Hindutva ideology has put the ‘scientific temper’ of Nehruvian times under visible stress. My presentations on science and rationality sometimes resulted in a number of polite, but obviously unfriendly, comments from the audience.

Legitimate cultural pride over path-breaking achievements of ancient Hindu scholars is being seamlessly mixed with pseudoscience. Shockingly, an invited paper at the recent Indian Science Congress claimed that Lord Shiva was the world’s greatest environmentalist. Another delegate blew on a ‘conch’ shell for a full two minutes because it would exercise the rectal muscles of Congress delegates!

Pakistan and India may be moving along divergent paths of development but their commonalities are becoming more accentuated as well. Engaging with the other is vital — and certainly possible.


Although I sometimes took unpopular political positions at no point did I, as a Pakistani, experience hostility. The mature response of both governments to the Pathankot attack gives hope that Pakistan and India might yet learn to live with each other as normal neighbours. This in spite of the awful reality that terrorism is here to stay.



Friday, 22 January 2016

Nuclear race can jeopardise strategic stability: US report

Conti­nued Indian and Pakistani nuclear weapons development could jeopardise strategic stability between the two countries, warns a congressional report sent to US lawmakers this week.

The Congressional Research Service (CRS), which prepared the report, notes that Pakistan’s nuclear arsenal is “designed to dissuade India from taking military action against the country”. But it continues to increase its production facilities, “deploying additional nuclear weapons, and new types of delivery vehicles”.

The report notes that India also “continues to expand its nuclear arsenal” but since the report is about Pakistan, it focuses on the Pakistani nuclear programme.

Pakistan’s N-arsenal ‘designed to dissuade India from taking military action’
However, authors of the report acknowledge that this nuclear race increases the risk of a nuclear conflict in the region. The report claims that Pakistan has approximately 110-130 nuclear warheads, although it could have more.

“Islamabad’s expansion of its nuclear arsenal, development of new types of nuclear weapons, and adoption of a doctrine called ‘full spectrum deterrence’ have led some observers to express concern about an increased risk of nuclear conflict between Pakistan and India,” the report warns.

It acknowledges that since 2004, Islamabad has taken a number of steps to improve its nuclear security and to prevent further proliferation of nuclear-related technologies and materials.

“A number of important initiatives, such as strengthened export control laws, improved personnel security, and international nuclear security cooperation programmes, have improved Pakistan’s nuclear security,” the report notes.

But CRS warns that ‘instability’ in Pakistan has “called the extent and durability of these reforms into question.”

It repeats an old fear, often echoed in Washington, “a radical takeover of the Pakistani government or diversion of material or technology by personnel within Pakistan’s nuclear complex”.

In the same paragraph, the report also notes that both the US and Pakistani officials “continue to express confidence in controls over Pakistan’s nuclear weapons”.

But “continued instability in the country could impact these safeguards,” the report adds.

Wednesday, 20 January 2016

تعلیمی اداروں کو کیسے محفوظ بنائیں؟

سانحہ پشاور کے بعد بے شمار آوازیں اٹھی ہیں اور کئی سوالات نے جنم لیا ہے کہ آئندہ ایسے واقعات کے سدباب کیلئے کیا اب تک اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔


اس حوالے سے ابتدائی طور پر تو اسکولوں میں موسم سرما کی چھوٹیاں بڑھادی گئیں۔ حقیقت میں دیکھا جائے تو کوئی بھی اسکول اس قسم کے حملوں میں خود سے اپنی حفاظت کر ہی نہیں کرسکتا تاہم ایک سوال یہ بھی اٹھتا ہے کہ کیا اسکولوں کے پاس اپنی حفاظت کیلئے ابتدائی حفاظتی انتظامات موجود بھی ہیں؟ کیا اسکول یہ جانتے ہیں کہ قدرتی آفات میں جیسے کہ زلزلہ اور سیلاب میں کیا کرنا ہیں؟ کیا اسکول یہ جانتے ہیں کے آگ لگ جانے کی صورت میں طلبہ اور طالبات کی حفاظت کو یقینی بنایا جاسکتا ہے؟

یہ کچھ سوالات ہیں جو بچوں کے والدین، اسکول جانے کی عمر کے بچوں کے سربراہان اور بحیثیت ایک ذمہ دار شہری کے آپ کو اسکول کی انتظامیہ سے کرنے چاہیئے:

ہنگامی صورت حال میں بچوں کے بارے میں ریکارڈز کی موجودگی

کیا اسکولوں کے پاس کسی قسم کی ہنگامی صورت حال میں بچوں کے بارے میں متعلقہ معلومات موجود ہیں؟ اگر نہیں تو ان کو پہلے مرحلے میں ہر قسم کی قابل رسائی معلومات فراہم کریں جو کسی بھی ہنگامی صورت حال میں آپ کی بچوں تک رسائی کو یقینی بناسکیں، ایسی معلومات جو آن لائن، سافٹ کاپی اور ہارڈ کاپی کی صورت میں دستیاب کی جاسکیں۔

ہنگامی صورت حال میں رابطے کیلئے معلومات کچھ اس طرح ہونی چاہئے تاہم درج ذیل معلومات سے کم بھی نہ ہوں:

بچے کے سربراہ کا نام

ہنگامی صورت حال میں رابطے کا پتہ اور نمبر

— بیماری یا معزوری

— اس صورت میں دی جانے والی ادویات

— خون کا گروپ

اسکو ل میں ہر بچے کو ایک کارڈ فراہم کیا جائے جس میں مندرجہ بالا تمام معلومات فراہم کی گئی ہو اور اس بات کا خاص خیال رکھا جائے کہ وہ بچہ اس کارڈ کو اسکول میں داخل ہونے کے بعد ہر وقت اپنے ساتھ رکھے یا گلے میں لٹکا لے۔

ہنگامی صورت حال میں اسکول کے رابطہ نمبر

والدین اور بچے کے سربراہ کیلئے:

کیا آپ کے پاس اپنے بچوں کے اسکول کے رابطہ نمبرز ہر وقت ہوتے ہیں؟

کیا آپ جانتے ہیں کے ہنگامی صورت حال میں آپ کو کس فون پر رابطہ کرنا ہے؟

اسکول کی انتظآمیہ کیلئے:

کیا آپ نے ہنگامی صورت حال کیلئے کوئی نمبر مقرر کیا ہے اور کیا اس نمبر کو بچوں، ان کے والدین اور اساتذہ کو فراہم کیا گیا ہے؟

یہ نمبر صرف والدین اور بچے کے سربراہان کیلئے مخصوص ہونا چاہئے جو اپنے بچوں کی فلاح و بہبود کے حوالے سے آپ سے رابطے میں رہ سکیں اور اس بات کا بھی خصوصی خیال رکھا جائے کہ بچوں کی ملنے والی مذکورہ معلومات کو انتہائی خفیہ رکھا جائے اور بچوں کو اس بات کا بھی علم ہونا چاہیئے کہ جس شخص کو ان کے بارے میں معلومات فراہم کی جارہی ہیں وہ ان کا حقیقی سربراہ ہی ہے۔

کیا آپ کے پاس مطالقہ اہم اداروں کے انتظامی افراد کے رابطہ نمبر موجود ہیں جن سے کسی بھی ہنگامی صورت حال میں رابطہ کیا جاسکتا ہو؟

یہ بات بھی اسکول انتظامیہ کے لئے انتہائی اہمیت کی حامل ہے کہ وہ اپنے متعلقہ علاقے کے اہم ریاستی اداروں جیسا کہ ایمبولنس سروس، فائر بریگیڈ سروس، پولیس اور یوٹیلیٹی ادارے(گیس، بجلی اور پانی) سے رابطے میں ہوں۔

حفاظت کی تربیت


آخری بار تعلیمی ادارے کی جانب سے کب ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کیلئے ڈرل کی گئی تھی؟

کیا بچوں اور اسکول کے عملے کو:

— ابتدائی طبی امداد فراہم کرنے کی تربیت دی گئی ہے

— ان کو آگ سے بچنے کیلئے ابتدائی معلومات کی آگاہی ہے

— زلزلے کی صورت میں اپنے بچاؤ کی احتیاطی تدابیر سے آگاہی ہے

— کسی بھی قسم کے غیر محفوظ صورت حآل میں کیا طریقہ اختیار کریں اس کیلئے ان کو تربیت دی جائے

کسی بھی ہنگامی صورت حال میں بڑی عمر کے بچے مدد فراہم کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں، اسی لئے تربیتی پروگراموں میں بچوں کی عمر کا خاص خیال رکھا جائے۔

ملک میں بہت سے لوگ رضا کارانہ طور پر ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کیلئے اپنا وقت اور صلاحیتیں صرف کر رہے ہیں ان کی مدد حاصل کی جانی چاہیے اور ایسی پیشہ وارانہ خدمات کو رقم خرچ کرکے بھی حاصل کیا جاسکتا ہے۔

یہ بات یاد رکھیں کہ جو باتیں بچوں کو اسکول میں سیکھائی جاتی ہے وہ ان کو کہیں اور بھی مدد فراہم کرسکتی ہیں۔

نقل و حمل

اگر آپ کے بچے اسکول جانے اور واپس آنے کیلئے ذاتی گاڑیاں استعمال کرتے ہو تو ان چیزوں کا خاص خیال رکھا جانا چاہیے:

— کس کو بچوں کی نقل و حمل کے لئے اختیار ہونا چاہیئے اور آپ اس کی تصدیق کس طرح کریں گے؟

بیشتر نجی اسکولوں میں بچوں کو ان کی تصاویر اور ان کی کلاس کے اندارج کے ساتھ شناختی کارڈ فراہم کئے جاتے ہیں۔ بچوں کو اسکول سے لانے کا جو بھی ذمہ دار ہو اس کے پاس مذکورہ کارڈ لازمی ہونا چاہیئے۔ اگر اسکول کی انتظامیہ بچوں کو لے جانے والے شخص سے واقف نہ ہوں تو انہیں چاہیئے کہ بچے کو روک کر پہلے اس کے سربراہ کی جانب سے دیئے گئے ہنگامی رابطہ نمبروں پر فون کرکے ان کو آگاہ کریں اور ان سے تصدیق کی جائے۔

اگر بچے اسکول سے خود اپنے گھروں کو جاتے ہو تو کن باتوں کا خیال رکھنا ضروری ہے؟

— اگر ایسا روزانہ کی بنیاد پر ہوگا تو اسکول کو اس حوالے سے مکمل معلومات فراہم کی جانی چاہیے

— اگر ایسا کبھی کبھار ہوگا تو اس کے بارے میں بھی ہر بات اسکول کے علم میں ہونی چاہیے

یہ سب کس طرح ممکن ہوگا اس کے بارے میں مختلف طریقے اختیار کئے جاسکتے ہیں لیکن ان سب کے لیے بچوں کے والدین کو اسکول کی انتظامیہ سے بات چیت کرنی چاہیے تاہم یہ والدین کے ساتھ اسکول کی بھی مشترکہ ذمہ داری ہے کہ بچوں کے اسکول سے بحفاظت اخراج کو یقینی بنائے۔

اگر بچوں کو لانے اور لے جانے کیلئے اسکول وین اور بسیں استعمال کی جاتی ہو تو:

— کیا اسکول اس حوالے سے اچھی اور قابل بھروسہ سروس استعمال کررہا ہے؟

— کیا ڈرائیورز کے رابطہ نمبر ان کے پاس موجود ہیں؟

— کیا گاڑی کے نمبر ان کے پاس موجود ہیں؟

— کیا ڈرائیورز کے معمولات کو چیک کیا جاتا ہے؟

ان سب معلومات کو حاصل کرنے کا مقصد کسی بھی ہنگامی صورت حال کا سددباب اور توازن پیدا کیا جائے تاکہ بچوں کے والدین، ٹرانسپورٹرز اور اسکول انتظامیہ کو ہوشیار رکھا جاسکے۔

جسمانی سلامتی

ابتدائی طور پر یہ ذہن میں ہونا ضروری ہے کہ ہر عام شخص کو بچوں کی معلومات آسانی سے حاصل نہ ہو سکیں۔

— اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ اسکول کے قریب سے ایسی تمام چیزوں کو دور رکھنے کی کوشش کی جائے جس سے دور تک دیکھنے میں دشواری کا سامان ہو۔

— اس بات کی بھی یقین دہانی کی جانی چاہیے کہ اسکول کے کو آنے اور جانے کے راستے استعمال نہ ہونے کی صورت میں مکمل طور پر بند ہو سکیں اور محفوظ ہو۔

— اس بات کا خاص خیال رکھا جائے کہ اسکول کے راستوں پر پارکنگ نہیں ہونی چاہیے اور ایسا بھی نہ ہو کہ اسکول کی عمارت اور پارکنگ کے درمیان طویل راستہ ہو۔

— اسکول میں تعلیمی اوقات میں راستوں پر خاص طور پر سی سی ٹی وی کیمرے نصب ہوں، اور ان راستوں پر سکیورٹی گارڈز اور گیٹ کیپرز کی موجودگی کو بھی لازمی ہونا چاہیے۔

اسکول کی عمارت کے اندر موجود کمرے انتہائی محفوظ ہوں اور اس بات کا بھی خیال رکھا جانا چاہیے کہ اسکول کی عمارت کو انتظامیہ کی جانب سے معمور شخص ہی بند کرتا ہو۔

ایسے الارم بھی استعمال کئے جائیں جن کو عمارت کے اندر ہی سے چلایا جا سکے۔

الارم کا استعمال کیا جانا چاہیے کہ کسی بھی ناخوشگوار صورت حال میں متعلقہ سکیورٹی یا نجی سکیورٹی کو مطلع کیا جاسکے تاکہ وہ اس کے سدباب کے حوالے فوری اور مؤثر اقدامات کر سکیں۔

ان الارمز کے استعمال کا ایک فائدہ یہ بھی ہوگا کہ ان کی آوازوں سے اسکول کے پڑوسی بھی ہوشیار ہو جائیں گے اور وہ متعلقہ اداروں کو فوری معلومات فراہم کردیں گے۔

مختصراَ یہ کہ بچوں کے والدین اور اسکول کی انتظامیہ کو بیٹھ کر اپنی جانب سے بچوں کیلئے ہر قسم کے حفاظتی اقدامات کو حتمی شکل دینی چاہیے۔ حکام کی جانب سے مؤثر اور بروقت حفاظتی منصوبہ اسی وقت تیار کیا جاسکتا ہیں جب تعلیمی اداروں کی جانب سے بہتر اقدامات اٹھائے گئے ہو۔

اسکول کی حفاظت اور سکیورٹی کو مد نظر رکھتے ہو ئے ان باتوں کا بھی خیال رکھا جانا چاہیے کہ:

— متعلقہ ماہرین اور حکام سے رابطے میں رہا جائے

— اسکول کی سکیورٹی اور حفاظت کے لئے سروے کروائے جائیں

— اسکول کے اسٹاف، بچوں کے والدین پر مشتمل ایک ٹیم تشکیل دی جانی چاہیے اور اگر ممکن ہوسکے تو اس میں سینئر بچوں کو بھی شامل کیا جاسکتا ہے۔

— رابطے کا ایک مؤثر سسٹم بنایا جائے

— اپنے منصوبے کی وضاحت کریں،اس کے لئے تربیت دے اور اس کی مشق کریں۔

پاکستان میں دہشت گردی کی نئی لہر

جس وقت دنیا بھر میں پاکستان کے حوالے سے یہ تاثر ابھر کر سامنے آرہا تھا کہ یہاں دہشت گردوں کے مضبوط ٹھکانوں کو ختم کردیا گیا ہے، ایسے میں پاکستان کو دہشت گردی کی نئی لہر نے جنجھوڑ دیا ہے اور نئے سال کے ابتدائی 20 روز میں ملک بھر میں دہشت گردی کے مختلف واقعات میں 60 افراد جاں بحق ہوچکے ہیں۔


گذشتہ روز باچا خان یونیورسٹی کے چار سدہ کیمپس میں ہونے والے حملے کے بعد صرف 2 روز میں دہشت گردی کے باعث ہلاک ہونے والوں کی تعداد 30 ہوگئی ہے، جس میں جمرود خود کش دھماکے میں ہونے والی ہلاکتیں بھی شامل ہیں۔

اگر انٹیلی جنس کی جانب سے دی جانے والی وارننگز ہی کو سب کچھ مان لیا جائے، تو خطرہ بہت زیادہ بڑھ چکا ہے اور آنے والے دنوں میں زیادہ ہولناک نتائج سامنے آسکتے ہیں۔

قومی سطح پر موجود سیکیورٹی کی بہتر صورت حال کے باعث گذشتہ کچھ عرصے میں حملوں کی تعداد میں نمایاں 60 فیصد تک کی کمی آئی تھی۔

نیشنل ایکشن پلان کے 20 نکات کے نفاذ کے بعد سے اب تک مختلف حوالوں سے کامیابیاں حاصل ہوئی۔

ملک میں انٹیلی جنس معلومات کے تحت کثیر تعداد میں کارروائیاں عمل میں لائی گئیں اور ان میں بے شمار دہشت گردوں کو گرفتار اور ہلاک کیا گیا۔

خیال رہے کہ ان آپریشنز کے ذریعے بہت سے دہشت گردی کے منصوبے ناکام بھی بنائے گئے تاہم اس کے باوجود دہشت گردی کی یہ لعنت اب بھی موجود ہے۔

ایک کے بعد ایک سانحہ ہمیں اس بات کی حقیقت بتاتا ہے کہ یہ دہشت گردی ابھی ختم نہیں ہوئی ہے، کم از کم فی الحال تو نہیں۔


پاکستان کو اندرونی طور پر سیکیورٹی چلینجز کا سامنا ہے لیکن یہ صرف ایک پہلو ہے۔



پاکستان کے قبائلی علاقوں سے دہشت گردوں نے اپنے ٹھکانے افغانستان کے سرحدی علاقوں کی جانب منتقل کردیئے ہیں جہاں پر وہ اپنے ڈیتھ اسکواڈ کو تربیت دے کر مسلسل پاکستان میں قتل وغارت کے لیے بھیج رہے ہیں۔

خلیفہ عمر منصور، جو کالعدم لشکر جھنگوی کا سابق کارکن رہا ہے اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) میں اپنا علیحدہ گروپ چلا رہا ہے، نے گذشتہ روز باچا خان یونیورسٹی کے چار سدہ کیپمس پر ہونے والے حملے کی ذمہ داری قبول کی۔ وہ افغانستان کے شمالی صوبے ننگرہار کے ضلع نازیان سے آپریٹ کررہا ہے اور حملہ آوروں کی تمام فون کالز افغانستان ہی میں ٹریس ہوئیں.

دہشت گردوں کے مذکورہ کمانڈر المعروف عمر نارے ماضی میں پشاور کے گرد ونواح میں ہونے والے دہشت گرد حملوں میں ملوث ہے، جن میں دسمبر 2014 میں آرمی پبلک اسکول اور ستمبر 2015 میں بڈھ بیڑ ایئربیس پر ہونے والا حملہ بھی شامل ہے۔ اس کے علاوہ فروری 2015 میں حیات آباد میں امامیہ مسجد پر ہونے والے حملے کا ذمہ دار بھی عمر نارے ہے، جس میں 20 نمازی ہلاک ہوگئے تھے۔

یاد رہے کہ آرمی پبلک اسکول پر حملے کے بعد چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف نے ننگرہار، کنڑ اور دیگر علاقوں میں موجود دہشت گردوں کی پناہ گاہیں ختم کرنے میں مدد فراہم کرنے کے لیے افغانستان کا دورہ کیا تھا، افغان صدر اشرف غنی باہمی اقدامات کے خواہش مند تھے، لہذا دونوں فریقوں نے دہشت گردوں کے خاتمے کے عزم کا اظہار کیا.


بعد ازاں افغان امن مذاکرات کا بھی آغاز کیا گیا تاہم وہ بھی بے نتیجہ ثابت ہوئے اور اس کے بعد افغانستان میں طالبان نے جارحانہ کارروائیوں کا آغاز کرتے ہوئے متعدد صوبائی دارالحکومتوں اور ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز پر قبضہ کرلیا اور کابل سمیت دیگر علاقوں میں خود کش دھماکے بھی کیے۔

ان واقعات پر افغان صدر اشرف غنی نے کچھ عرصہ انتظار کے بعد اعلانیہ طور پر پاکستان کو اپنے ملک کے خلاف غیر اعلانیہ جنگ کا ذمہ دار قرار دے دیا۔

تاہم جلد ہی یہ اندازہ لگاتے ہوئے کہ وہ افغانستان کی موجودہ صورت حال سے پاکستان کی مدد کے بغیر نہیں نمٹ سکتے، انھوں نے اسلام آباد کا دوبارہ دورہ کیا۔

افغان صدر اشرف غنی اور چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف کے درمیان ہونے والی ایک ویڈیو کانفرنس نے اس عمل کے دوبارہ آغاز میں مدد فراہم کی۔

 '

اس کا نتیجہ یہ ہوا کہ طویل عرصے سے پاکستانی سیکیورٹی اسٹیبلشمنٹ کی مخالفت کرنے والے افغانستان انٹیلی جنس چیف رحمت اللہ نبیل مستعفی ہوگئے۔

اس کے بعد اشرف غنی نے گذشتہ سال دسمبر میں اسلام آباد میں منعقد ہونے والی ہارٹ آف ایشیا کانفرنس میں شرکت کی اور دونوں ممالک کے درمیان فوجی اور انٹیلی جنس تعلقات کے نئے طریقہ کار کی پیش کی۔

اس موقع پر پاکستان کی جانب سے ایک بار پھر افغان 'امن' عمل میں 'سہولت کار' کی حیثیت سے مدد فراہم کرنے کے عزم کا اعادہ کیا گیا۔

7 دسمبر 2015 کو جنرل راحیل شریف نے ایک بار پھر افغان دارالحکومت کا دورہ کیا۔

ڈائریکٹرز جنرلز آف ملٹری آپریشنز کے درمیان فوری رابطے کا طریقہ کار وضع کیا گیا اور پاکستان کے ڈی جی ایم او نے دو بار کابل کا دورہ کیا۔

افغان انٹیلی جنس ادارے نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکیورٹی (این ڈی ایس) اور پاکستانی انٹرسروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے درمیان انٹیلی جنس شیئرنگ اور تعاون پر ہونے والی افہام و تفہیم ایک نتیجے پر پہنچ گئی۔


لیکن اچانک ہی کچھ عجیب واقعات رونما ہوئے، 4 جنوری کو افغانستان کے شہر مزار شریف میں طالبان نے ہندوستانی سفارت خانے کو نشانہ بنایا۔ 13 جنوری کو جلال آباد میں قائم پاکستانی سفارت خانے کو ایک خود کش بمبار نے نشانہ بنایا اور اس کی ذمہ داری داعش کے خراسان گروپ نے قبول کی۔

اسی دوران ہندوستان میں پٹھان کوٹ کا واقعہ پیش آیا اور ساتھ ہی پشاور اور بلوچستان میں دہشت گردوں نے ایک بار پھر سر اٹھانا شروع کردیا۔

ویسے تو پاکستان، افغانستان اور ہندوستان میں ہونے والے ان دہشت گرد حملوں کا براہ راست تعلق نہیں ہے تاہم سیکیورٹی اسٹیبلشمنٹ کا ماننا ہے کہ ان میں ناقابل تردید لنک موجود ہیں.

یہ ایک طرح سے 'جیسے کو تیسا' والا نظریہ بھی معلوم ہوتا ہے، جسے افغان این ڈی ایس نے رحمت اللہ نبیل کی سربراہی میں تشکیل دیا تھا، جس کے مطابق 'اگر تم ہمارے ساتھ یہ کرسکتے ہو تو ہم بھی تمھارے ساتھ یہی کرسکتے ہیں' والی پالیسی کو نہایت مہارت سے اپنایا گیا۔

یہاں ٹی ٹی پی کے سربراہ حکیم اللہ کے قابل اعتماد کمانڈر لطیف محسود کا کیس بھی ذہن میں رکھنا چاہیے، جسے اکتوبر 2013 میں امریکا نے اُس وقت گرفتار کیا جب وہ افغان سیکیورٹی ایجنسی این ڈی ایس کے حفاظتی قافلے کے ہمراہ کابل میں ایک اجلاس میں شرکت کے لیے جارہا تھا۔ یہ کھیل شاید ابھی ختم نہیں ہوا ہے اور اُس وقت تک نہیں ہوگا جب تک یہ گٹھ جوڑ ختم نہیں ہوجاتا۔

اور شاید اُس وقت تک ختم نہیں ہوگا جب تک پاکستان اور افغانستان خلوص کے ساتھ مذاکرات کی میز پر نہیں آجاتے۔


Sunday, 17 January 2016

یوٹیوب کھولنے میں حکومت خود رکاوٹ

: تمام تر رکاوٹیں دور ہونے کے باوجود وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی (آئی ٹی) اب تک مقبول ویڈیو شیئرنگ ویب سائٹ یوٹیوب کو کھولنے کے حوالے سے نوٹیفیکیشن جاری نہیں کرسکی جس کے باعث گوگل اور وفاقی حکومت کے درمیان متوقع ڈیل بھی نہ ہوسکی۔

تفصیلات کے مطابق گوگل انتظامیہ نے پاکستان کے آئی ٹی ڈپارٹمنٹ کی درخواست پر یوٹیوب پی کے (youtubepk) کو بنانے میں کروڑوں روپے خرچ کیے ہیں تاکہ ویب سائٹ کے کونٹینٹ کی مقامی طور پر نگرانی کی جاسکے۔

تاہم وزارت آئی ٹی کے ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ گوگل کو جمعرات کے روز حکومت کے ساتھ بغیر کوئی ڈیل ہوئے ہی واپس لوٹنا پڑا۔

پاکستانی حکام نے منگل کے روز یوٹیوب سے پابندی اٹھانے کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا تھا۔

پانچ گھنٹوں تک جاری رہنے والی گفتگو کے بعد وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے وزیر آئی ٹی انوشہ رحمان نے یوٹیوب کو کھولنے کے حوالے سے نوٹیفیکیشن جاری کرنے کی درخواست کی تھی۔

تاہم ذرائع کے مطابق 'اب جمعہ آچکا ہے اور اس سلسلے میں کچھ بھی نہیں کیا گیا۔'

انہوں نے کہا کہ 'حکومت اور گوگل یوٹیوب پی کے کو شروع کرنے پر متفق ہوئے تھے اور اس ویب سائٹ کی لانچنگ اور یوٹیوب کو کھولنے کا اقدام ایک ساتھ لیا جانا تھا۔'

'تاہم گوگل کے نمائندے تین روز تک انتظار کرنے کے بعد ملک چھوڑ کر چکے گئے ہیں۔'

ماہرین کا خیال ہے کہ وزارت آئی ٹی کی سستی کی وجہ سے گوگل کا اس معاملے سے پوری طرح نکل جانے کا خدشہ پیدا ہوگیا ہے یا پھر مسقبل میں عدالت سے رجوع کیے جانے کی صورت میں اس پر پھر مکمل پابندی بھی لگ سکتی ہے۔

پاکستان سافٹ ویئر ہاؤسز ایسوسی ایشن کی صدر جہاں آرا کا کہنا تھا کہ وہ یوٹیوب کے 'مقامی' ورژن کے حق میں نہیں۔

'اس سے حکومت کو کسی بھی چیز پر پابندی لگانے کا حق حاصل ہوجائے گا جو آزادی رائے کی خلاف ورزی ہے۔'

تاہم انہوں نے کہا کہ اگر حکومت نے گوگل سے اس حوالے سے ڈیل کر ہی لی ہے تو یہ کچھ نہ ہونے سے تو بہتر ہے۔

خیال رہے کہ پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علی وسلم کے متعلق گستاخانہ مواد کی موجودگی کے باعث پاکستان میں 2012 سے یوٹیوب پر پابندی عائد ہے

پاکستانی سرحد کے ساتھ ’لیزر وال‘کا ہندوستانی منصوبہ

نئی دہلی: ہندوستان کی حکومت نے پاکستانی سرحد سے ملحقہ 40 سے زائد کمزور مقامات پر جلد ’لیزر وال‘ لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔

ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ میں ہندوستانی وزارت داخلہ کے حکام کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا ہے کہ سرحد پار سے کسی بھی طرح کی دراندازی سے بچنے کے لیے 'لیزر وال' کے اس منصوبے کو ہندوستان بڑی اہمیت دے رہا ہے۔

حکام نے بتایا کہ ہندوستان کی بارڈر سیکیورٹی فورس (بی ایس ایف) کی جانب سے تیار کردہ یہ لیزر وال ٹیکنالوجی پاکستانی صوبے پنجاب سے ملحقہ تمام کمزور مقامات پر لگائی جائے گی تاکہ سرحد پار سے کسی بھی ممکنہ دہشت گردی کے خطرے کو ختم کیا جاسکے۔

لیزر وال ایک ایسا میکانزم ہے جس کے ذریعے اس وال سے کسی بھی چیز کے گزرنے کی صورت میں فوری طور پر سائرن بجنا شروع ہوجائیں گے۔

ابتدائی طور پر تقریباً 40 میں سے پانچ یا چھ کمزور سرحدی مقامات پر یہ ’لیزر وال‘ نصب کردی گئی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مبینہ طور پر پٹھان کوٹ ایئربیس پر حملہ کرنے والے کالعدم جیش محمد کے 6 دہشت گرد بامیال میں واقع دریائے اُچ کے ذریعے ہندوستان میں داخل ہوئے اور اس مقام پر لیزر وال نہ ہونے کی وجہ سے ہی ہندوستانی حکام کو حملہ آوروں کے داخلے کا علم نہ ہوسکا۔

حیرت انگیز طور پر اس مقام پر نصب جدید ترین کیمرے سے بھی مبینہ حملہ آوروں کی فوٹیج حاصل نہیں ہوسکی۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ بی ایس ایف، وزیر اعظم نریندر مودی کے گزشتہ ہفتے 9 جنوری کو ایئربیس کے دورے سے قبل ہی اس مقام پر لیزر وال لگا چکی ہے۔

واضح رہے کہ ہندوستانی بی ایس ایف نے گزشتہ سال جولائی میں گورداس پور پر حملے کے بعد اپنے زیر انتظام کشمیر کے سرحدی مقامات پر لیزر وال لگانے کا آغاز کیا تھا۔

Friday, 15 January 2016

Two IS-inspired militants ‘rehabilitated’ in Karachi

Caught in Iran while travelling illegally to Syria to join the militant Islamic State group before being repatriated to Pakistan, two youngsters have turned away from ‘armed struggle’ after being ‘rehabilitated’ with the support of their families and security administration, officials said on Friday.

Although still under surveillance, the men in their early 20s have no more militant tendencies according to the psychiatrists who evaluated their condition, said official in charge of the Counter-Terrorism Department (CTD) Raja Umer Khattab.

The two men belonging to the middle and upper middle class families of Karachi were handed over to the Federal Investigation Agency (FIA) by the Iranian authorities before being given into the custody of the Quetta police.


The CTD officer, who had been handed over their custody in Karachi, said they had suffered so much hardship for over one month during their attempts to reach Syria that they were unable to repeat such an arduous job.

They had no Jehadi background until they came into contact with Abu Khalid aka Abu Uqba through separate Twitter accounts, he said.

This Middle East-based militant arranged their meeting in Karachi and asked them to reach the Turkey border from where they would be picked up to facilitate their recruitment in ISIS.

Each of the two youngsters, whose identities have been kept secret, gave Rs260,000 to human smugglers in Balochistan to arrange their travel to Iran.

Finally, they along with some 25 other people trussed up with a piece of rope were taken in a Vigo vehicle across the border through the hilly terrain.

Having little idea of directions, they roamed around for a month without success in reaching the Turkey border. It was during this time that the Iranian authorities arrested them and handed over them to the FIA, he said.

“Their case is the only authentic evidence indicating attempts of youngsters to join IS militants in Syria willingly,” believed the CTD officer. So far, he added, no other evidence had emerged about people going to join IS militants.

As they had no previous militancy record, they were released after being ‘rehabilitated’ with the help of psychiatrists and their families, said Mr Khattab.

The police officer further said: “So far, no link has been established between IS-inspired militants held in Karachi after the Safoora carnage and the recent arrest of such elements in Sialkot, Punjab, and IS chief Abu Bakr Al-Baghdadi-nominated IS leaders Hafiz Saeed and Shahid Shahidullah in the country.

“These are small self-styled IS-inspired militant groups, operating separately. They had no single platform under which they could unite to carry out terror acts.”

These IS-inspired militants were mostly splinter groups of religious organisations such as Tanzeem-i-Islami though “TI’s direct link with terror has not yet been found,” said the CTD official. But its splinter group comprising Hafiz Umer, Hafiz Nasir, Ali Rehman, Akhter Ishrat and Asad Rehman and others were found inspired by IS, he said.

Some of them were held for their alleged involvement in attack on the Ismaili community bus near Safoora Goth, Bohra community, Imambargahs and killing of policemen and social activist Sabeen Mahmud.

Mr Khattab admitted that the IS-inspired group after the arrest of their accomplices in the Safoora case killed the driver of Ms Mehmud and Sub-inspector Malik Ashfaq, who had collected evidence against Tahir Minhas, one of the suspects in the Safoora case.

But he said: “With these attacks, they just wanted to make their presence felt, as the killing of the driver and the officer will not harm the two cases.”

Sunday, 10 January 2016

Kerry favours continuation of Pak-India peace talks despite hurdles

The United States on Saturday said that continuation of India-Pakistan peace talks is in the best interest of the regional stability, Radio Pakistan reported.


US Secretary of State John Kerry telephoned Prime Minister Nawaz Sharif and lauded his role in carefully tackling the prevailing situation in the wake of the recent gunmen attack on Indian air base.

Nawaz apprised Kerry that Pakistan is swiftly carrying out investigations into Pathankot incident and will soon unearth the truth.

“World will see our effectiveness and sincerity in this regard,” he added.

Kerry hoped that “talks between Pakistan and India would continue despite efforts to thwart the process”.

Pakistan was eliminating terrorism from its soil and would not allow anyone to use its soil to conduct terror operations abroad, Nawaz told the US Secretary of State.

US Secretary Kerry extended full support to the prime minister in finding out the actual perpetrators behind Pathankot incident.

Earlier on Thursday, a US State Department spokesman had said it was up to the Pakistan government to determine how long it would take to investigate the attack on the Pathankot air base following information provided by India.

The statement came after India said it was awaiting Pakistan’s response on the information provided on the Pathankot incident, following which it will decide on the resumption of bilateral talks scheduled for later this month.


India's foreign ministry said Islamabad has been given actionable intelligence that those who planned the assault came from Pakistan.

"As far as we are concerned, the ball is now in Pakistan's court," spokesman Vikas Swarup told reporters when asked if the talks were on. "The immediate issue in front of us is Pakistan's response to the terrorist attack."

The US State Department spokesman said Pakistan has condemned the attack and has made clear its commitment to investigate it.

Seven Indian security men and four suspected gunmen were killed during an assault, on Indian air base near the Pakistan border, which threatened to undermine the two countries' fragile peace process.

Saudi defence minister due today

Saudi Arabia’s Deputy Crown Prince Muhammad Bin Salman, who is also the deputy prime minister and minister for defence, is arriving here on Sunday for a daylong trip for seeking Pakistan’s support as the kingdom mulls additional steps against Iran.

This would be the second high-profile visitor from Riyadh in three days. Foreign Minister Adel al-Jubeir visited Islamabad on Thursday for discussing Riyadh’s tensions with Tehran and the counter-terrorism coalition that Saudi Arabia has announced.

Prince Muhammad would follow up on the discussions FM Jubeir had here.


A military cooperation arrangement is expected to be concluded
He would meet Prime Minister Nawaz Sharif, Minister for Defence Khawaja Asif and Chief of Army Staff Gen Raheel Sharif.

Pakistan has indicated it could consider the Saudi invitation to join the 34-nation coalition (proposed by Riyadh before the Iran spat). However, no official announcement has been made so far.

Islamabad has criticised Iran for reacting to Saudi cleric Sheikh Nimr’s execution and sees it as interference in internal matters of the kingdom.

FM Jubeir on Saturday, after an extraordinary meeting of the foreign ministers of the Gulf Cooperation Council, said that Saudi Arabia could take further steps against Iran if tensions were to escalate.

A source said that the Saudi defence minister is expected to conclude a military cooperation arrangement during the trip, which the two sides have been negotiating recently.

Saudi Assistant Defence Minister for Military Affairs Muhammad Bin Abdullah al-Ayish earlier visited GHQ and his trip was followed by discussions at other levels. Details of the cooperation agreement are being kept under wraps.

A military official described intensified contacts as part of Riyadh’s heightened diplomatic outreach to allied countries amid aggravating tensions with Iran.

Chairman Joint Chiefs of Staff Committee Gen Rashad Mahmood is also expected to visit Saudi Arabia later this month

Friday, 8 January 2016

سامان بھول جانا پرانی عادت، پی آئی اے اب میت کو لانا بھی بھول گئی

 کراچی: اربوں روپے خسارے کا شکار قومی ایئر لائن کی انتظامیہ کی جانب سے مسافروں اور ان کے سامان کو چھوڑ کر منزل کی جانب روانہ ہو جانا کوئی نئی بات نہیں ہے لیکن اس بار پی آئی اے میت کو ہی بیرون ملک چھوڑ کر آگئی۔
ایکسپریس نیوز کے مطابق دبئی سے لاہور آنے والی پی آئی اے کی پرواز پی کے 204 نے ایک میت کو ساتھ لے کر آنا تھا لیکن انتظامیہ کی غفلت کے باعث میت دبئی ایئرپورٹ پر ہی رہ گئی جب کہ فلائٹ لاہور پہنچ گئی۔ لاہور پہنچنے پر میت کے ورثا جب اپنے پیارے کی لاش وصول کرنے پہنچے تو معلوم ہوا کہ میت تو دبئی میں ہی رہ گئی ہے جس پر ورثا کی جانب سے پی آئی اے انتظامیہ کے خلاف احتجاج کیا گیا اور شدید نعرے بازی کی گئی۔
پی آئی اے حکام نے انتظامیہ کی لاپرواہی اور واقعہ کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے میت کو دبئی سے آنے والی دوسری پرواز پی کے 214 سے لانے کا اعلان کیا لیکن میت کو پہلے دبئی سے کراچی پہنچایا جائے گا جہاں سے اسے لاہور کے لئے روانہ کیا جائے گا۔

Seven more children die in Thar, drought toll rises to 27

At least seven more children lost their lives in the drought-hit Thar desert, raising the death toll to 27 this month, while at least 220 of them were admitted to several hospitals of the district for treatment on Friday.

Of the deceased children, four died in the remote villages of Nagarparkar, while one each in Mithi, Islamkot and Diplo, before they could be taken to hospitals.

Provincial food minister Syed Nasir Hussain Shah, who is also a member of the committee formed on Thursday by Sindh Chief Minister Syed Qaim Ali Shah to look into the situation, reached Mithi town to visit the admitted children.

Later, talking to local journalists at the Deputy Commissioner's office, he claimed that the Sindh government was "fully committed to provide maximum facilities" in the health units of the drought-hit desert.

Nasir Shah admitted that there was a drought-like situation but considered the media's portrayal of the situation as "alarming" an exaggeration.


The Thar region of Sindh, which has climatic and ecological conditions similar to the Indian state of Rajasthan’s portion of Thar, faces severe droughts for two to three years in every 10-year cycle.

He expressed grief over the death of children and said that hospitals and health units would be given "top priority" by the five-member committee formed by Sindh government.

Nasir Shah also directed officials of the revenue department to suspend the ongoing collection of agriculture taxes from farmers and reimburse any taxes collected from them in recent days.

After receiving a detailed report from DC Tharparkar, the provincial minister said he would ask Qaim Ali Shah to declare Thar as drought-hit area and announce a relief package for the affected population, along with the monetary compensation for the heirs of the dying children.


Nasir Shah said he was looking into the matter and constantly receiving feedback from government officials. He said that all announcements made by the Sindh chief minister would "immediately be implemented".

Furthermore, he said that the Thar Development Authority, envisaged and drafted by the Sindh government earlier after the deaths of the children in 2014, would be formed soon to develop proper infrastructure and civic facilities in the district and improve living standards of residents.

MNA Fakeer Sher Mohammad Bilalani, MPA Dr Mehesh Kumar Malani, Adviser to CM Inayat Rahimoon and other PPP officials were also present during the briefing.

However, members of Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) and Thar Ittehad were not invited to the meeting by the local administration.

LinkWithin

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...